‘Zindgi Thee’ (it was life) – Urdu poem by Fauzia Rafique

In urdu and Roman.
View English translation.

ژندگی ثھی

 (بچھڑی اور ان بـچھڑی سہیلیوں کے نام)

فو‍ژیہ رفیق

.

 ژندگی ثھی

جو پیچھے گژاری ہے میں نے

کہانی نہیں

جو سنا دی گیی ہو

.

ثم وہیں ثھیں، میں رنگین چادر میں

ژخمی بدن

چھپا پھر رہی ثھی

 گردہی ثھی

ثم نے بھی مجھ کو سنبھالا دیا ثھا

ثرے ساثھ گژرے

لمحوں کي صداقث

ثمہاری رفاقث

کی طاقث کی لو مین

سالہا سال اپنی روح کا ملہم

میں نے مل مل کے

اپنے پہ کاری کیا ہے

کسی ژخم کا کویی بھدا نشاں

مری ژاث پر اب جو باقی نہیں

ثو یہ ثو نہ سمجھو

کہ حملہ

نہیں ثھا

.

اپنے دل کے لہو سے

جلا آنسووں کے دیے

مین نے اپنے بدن کو جو روشن کیا ہے

ثو یہ ثو نہ سمجھو

اندھیرا

نہیں ثھا

.

آنکھ میں دید کی بجلیاں

ژندگي کی چمک

 میرے دل سے لپک

میرے آنگن میں ناچے رلے رنگڑی

ثو یہ ثو نہ سمجھو

کہ غم کا ژمانہ

آیا

نہین ثھا

.

          ژندگی ثھی

جو پیچھے گژاری ہے میں نے

کہانی نہیں

جو سنا دی گیی ہو

.

اگر ثم یہ سمجھو

 کہ حملہ

نہیں ثھا، اندھیرا

نہیں ثھا کہ

غم کا ژمانہ

آیا نہین ثھا

ثو دل مین مرے کسک سی رہے گی

 میري کہانی

ثمہاری بھی ہے

سـچ جھوٹ میں گڈ

مڈا جایے گا

اور کسی وقث میں

جب ثمہیں

اپنی کہانی

سنانی پڑے گی

ثوسچ جھوٹ میں گڈ مڈایا ہوا

دکھے نہ رکھے

حملہ آور ثمہیں، یہ پثہ نہ لگے

اندھیرا ہے یاں

یا روشنی

کہ میري کہانی

ثمہاری بھی ہے

.

ثم پہ بھی دنیا میں حملے

ہویے ہیں، ثم نے بھی وار

خالی دیے ہیں، غموں کے ژمانوں

کے صدقے

کے  آنسو

ثم نے بھی آنکھ بھر کے پیے ہیں

اپنے سارے اندھیروں کے رنگ

جانثی ہو، ‏غم کی شکل

پہچانثی ہو

یا کہو

ہاں کہو

ثمہاری کہانی

میری نہیں

.

 ژندگی ثھی

جو پیچھے گژاری ہے میں نے

کہانی نہیں

جو سنا دی گیی ہو

۔۔

.

Zindgi Thee
(Bichhrri aur un-bichhrri sahailiyoN ke naam)
Fauzia Rafique

Zindgi thee
jo peechay guzaari hai maiN ne
kahani nahiN
jo sunaa de gayi ho

Tum waheiN theeN, maiN rangeen chadar maiN
zakhmi badn
chhuppa phhir rahi thee
gir rahi thee
tum ne bhi mujhh ko sanbhala diya tha
tere saath guzray
lamhoN ki sdaaqat
tumhari rafaaqat
ki taqat ki lau maiN
saal ha saal apni rooh ka malham
maiN ne mal mal ke
apnay pe kaari kiya hai
kissi zakhm ka koi bhhada nishaN
meri zaat per ab jo baqi nahiN
tau yeh tau na samjho
keh hamla
nahiN tha

Apnay dil ke lahoo se
jala aaNsoowoN ke diye
maiN ne apnay badn ko jo roshan kia hai
tau yeh tau na samjho
andhera
nahiN tha

Aankhh maiN deeed ki bijliyaN
zindgi ki chamk
mere dil se lapk
aangan maiN naachay rallay rangrri
tau yeh tau na samjho keh
gham ka zamaana
aya
nahiN tha

Zindgi thee
jo peechay guzaari hai maiN ne
kahani nahiN
jo sunaa de gayi ho

Agar tum ye samjho
ke hamla
nahiN tha, andhera
nahiN tha ke
gham ka zamana
aaya nahiN tha
tau dil maiN mere kask si rahe gi
keh meri kahani
tumhari bhi hai
sach jhooT maiN gadd
-madda jaye ga
aur kissi waqt maiN
jab tumhaiN
apni kahani
sunani parray gi
tau sach jhoot maiN gadd maddaya howa
dikhhay na dikhhay
hamla-aawar tumhaiN, yeh patta na laggay
andhera hai yaaN
ya roshni
keh meri kahani
tumhaari bhi hai

Tum pe bhi dunya maiN hamlay
howay haiN, tum ne bhi waar
khali diye haiN, ghamoN ke zamanoN
ke sadqay
ke aansoo
tum ne bhi aankhh bhar ke peye haiN
apnay saaray andheroN ke rang
janti ho, gham ki shakl
pehchanti ho
ya kaho
haaN kaho
tumhari kahani
meri nahiN

Zindgi thee
jo peechay guzaari hai maiN ne
kahani nahiN
jo sunaa de gayi ho
..

View English translation.

fauziarafique2012
.

Advertisements

10 thoughts on “‘Zindgi Thee’ (it was life) – Urdu poem by Fauzia Rafique

  1. Pingback: An ‘Ought To Be Taught’ Poem | Fauzia Rafique

  2. Ye poem har aurat ke dil ki awaz hey jis main dard ki chashni aur jazbat ka haseen sangam nazar aa raha hey. beshak ye hubsurat alfaz ka chunao and chashme ki jankar ki manind dil main utar jati hey. Fouzia Hanif, Lahore

    Like

  3. Pingback: ‘It was Life’ by Fauzia Rafique « Fauzia Rafique

  4. اتنی خوبصورت نظم کہ میرے پاس اتنے خوبصورت لفظ نھیں سراھنے کے لیے، اب وہ سارے پل مُجھے یاد آنے لگے ھیں کہ جب بھی میں اوندھے منہ گری ، تم نے مجھے سہارا دیا، تمھاری قامت اتنی بلند ھے کے بے شمار لوگ تمھارے سامنے کھٹرے ھوے کیڑے مکوڑے دکھائ دیتے ھیں۔ تم خود مسکراتے ھوےان مکوڑوں پر قدم رکھے گزر جاتی ھو ۔۔۔اور میں جب بھی لمبے قد میں بونے لوگوں سی زخمی ھو کر کّراھی تم نے مجھے سنبھالا دیا۔۔تم اپنے دوستوں کے لیے نعمت ھو، تم سے میں نے بہت کچھ سیکھا۔۔سب سے بڑی بات جو میں نے دل پر لکھ لی کہ بونوں کو نظر انداز کرو اور صرف اپنے آپ کو دریافت کرو۔۔۔تمھاری دوستی پرفوزیہ جتنا بھی فخر کیا جائے کم ھے۔ تمھاری خوبصورت نظم نےمجھے وہ میرے سب نحیف لمحے یاد دلا دیے ھیں جن کو تم نے تقویت دی ، وہ بونے بچھوُ آج بھی اپنی اپنی دُم پر زھر کا بوجھ اٹھائے پھرتے ھیں اور مجھے آن پر صرف ھنسی آتی ھے

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s